زندگی کا مقصد – عائشہ جاوید


.

ھم سب  اج کل ا يک عجیب دور سے گزر سے رھۓ  ھيں ۔ہز اروں لا کھوں ا نسان ایک  و با کی با عث اس د نیا سے رخصت ھو چکے ھیں ، ان لوگوں کی زندگی بھی اتنی ہی قیمتی تھی جتنی کہ ميری اور آپ کی . يہ ھم سب کے لیے ايک لمحہ فکريہ ہے، ہميں يہ سوچنا اور سمجھنا چاھيے کہ زندگی خدا کی دی ہوی ايک بہت بڑی نعمت ھے اور اس کا ايک ایک لمحہ قيمتی ہے ہمیں اس کی قدر کرنی چاھيے اور اپنی زندگی کا مقصد ضرور تعین کرنا چا ھيے

خدا نے انسان کو جب وجود بخشا تو پھر اسے زندگی کے اندھيروں ميں تنہا نہں چھوڑا بلکہ اس کی ذ ہنی اور روحانی تربيت کا بہترين انتظام بھی کیا . انسان اس دنيآ ميں علم اور عقل کے اعتبار سے اپنے سامنے guidance اور ہدايآت کے نمونے ديکھتا ہے تاکہ ان کی روشنی میں اپنی   زندگی کا صحیح مقصد قائم کر سکے . بامقصد زندگی انسان میں ذوق عمل اور محنت کا جذبہ پیدا کرتی ہے اور عمل سے ہی اس کی خوبیاں نکھر کر سامنے آتی ہیں اور یوں وہ ہر لمحہ ترقی کے راستے پر گامزن ہوتا ہے .

جب آدم نے زمین پر قدم رکھا تو فرشتوں نے اس کا استقبال یوں کیا

بقول شاعر شعر

کھول آنکھ زمیں دیکھ فلک دیکھ فضا دیکھ

 مشرق سے ابھرتے ہوئے سورج کو ذرا دیکھ

یعنی اس دنیا کا مشاہدہ کرکے اسے تسخیر کر

 میں اپنے آپ کو بہت خوش نصیب سمجھتی ہوں کہ پانچ سال کی عمر میں مجھے ایسا علمی اور ادبی ماحول ملا کہ جس کے گہرے نقوش میری زندگی کا انمول سرمایا ہیں .

 جدا کے  ایمبیسی سکول میں اپنی تعلیم کی ابتدا کی  . وہاں کا خوشگوار ماحول اور ٹیچرز کا بے لوث  محنت  سے کام کرنے کا جذبہ آج کل کے دور میں میں کم نظر آتا ہے . وہاں سالانہ گریجویشن  کے فنکشن بڑے ذوق و شوق سے منائے جاتے  تھے جن میں علامہ اقبال اور دوسرے معروف شعراء کی شاعری پر ڈرامے اور تقریریں مقابلے منعقد کئے جاتے

اس سکول سے وابستہ تمام لوگ اساتذہ اور طلباء بڑی چاہت کے ساتھ ان فنکشن میں حصہ لیتے تھے

اس کا اثر وہاں کے رہنے والے  دوسرے لوگوں پر بھی پڑا اور وہ بھی اس ادارے سے مانوس ہو گئے

آج تک وہ لوگ جو اس سکول سے وابستہ رہ چکے  ہیں  وہ  اسے بڑی عقیدت سے یاد کرتے ہیں

اس ادارے نے ان سب میں ایک علم اور عمل کی لگن پیدا کی

تعلیمی ادارے ارے جب دولت کمانے کا ذریعہ بن جائیں تو تمام طلباء علم محض دولت کمانے کے لیے حاصل کرتے  ہیں ان میں اخلاص نیت اور قربانی کا جذبہ اجاگر نہیں ہوتا

علم اگر  تن کی آسائش کے لیے حاصل کیا جائے تو وہ بیکار اور ایک زہریلا سانپ ہے اور اگر روح کی غذا اور انسانیت کی خدمت کے جذبے کے لیے حاصل کیا جائے تو وہ بہترین دوست اور مخلص ساتھی ہیں

آج کے دور کا بڑا المیہ یہ ہے کہ طالب علموں کو علم نافع اور صحیح اور سچی قدروں سے آگاہ نہیں کیا جاتاا اور وہ زیادہ سےزیادہ والے علم کو فائدہ مند سمجہتے ہیں

بقول شاعر

ہوس نے کر دیا ہے ٹکڑے ٹکڑے انسان کو

اخوت کا بیاں ہو جا محبت کی زباں ہو جا

ہمیشہ سے دو طرح کے علم فائدہ مند سمجھے گئے ہیں . میڈیکل یا جسمانی علم , spiritual  روحانی علم

یہ دونوں عالم بھی  تب ہی فائدہ پہنچا سکتے ہیں اگر انسان اپنی نیت کو درست رکھے اور اس میں خدا کی رضا شامل کرے

انسان اس دنیا میں ایک محدود عرصے کے لیے ہے اور جس دور سے انسانیت آجکل گزر رہی ہے وہ اس کی جیتی جاگتی مثال ہے.تو ہم کیوں نہ اپنی زندگی کا مقصد ایسا تعین کریں جو ہمیشہ فائدہ دے اور آگے آنے والی نسلوں کے بھی کام آئے

ہمارے آگے دو راستے ہیں  ایک فنا جو کہ دنیا کی دولت و ثروت ہے  جو کہ زندگی کے خاتمے کے ساتھ یہی رہ جائے گی اور ہمارے کام نہ آئے گی

دوسرا بقا کا جو کہ لا محدود اور بے پایاں ہے اور ہمیشہ رہنے والا ہے جس میں انسانیت کی خدمت کا جذبہ اور خدا کی رضا شامل ہے

بقا کو پانے کے لیے ہمیں سب سے پہلے اپنی اصلاح کرنی ہے تاکہ ہمارا وجود دوسرے لوگوں اور معاشرے کے لئے بھی فائدہ مند ہو

بقول شاعر

برتر از اندیشہ سود و زیاں ہے زندگی

  ہے کبھی جان اور کبھی تسلیم جاں ہے زندگی

زندگی کے نفع اور نقصان کے اندیش اور فکر سے بلند ہوکر ہمیں سب سے پہلے اپنی اصلاح کرنی ہیں اور خود کو بدلنا ہے تاکہ ہمارا وجود  دوسرے لوگوں اور معاشرے کے لئے بھی فائدہ مند ہو

آج تک جتنے بھی عظیم لوگ جو اس دنیا سے رخصت ہو چکے ہیں اور جن کا نام زندہ ہے ان سب نے بہت درد مندی اور اخلاص کے ساتھ معاشرے کو بدلہ اور انسانیت کی خدمت کی اور یہی راستہ بقا کا ہے

[Transcription in Urdu by Onaiza Javed]

Knowledge that is self-serving and divorced from community service is useless and treacherous. But knowledge acquired to nourish one’s soul and serve others, can be a kind and dependable ally.

Ayesha Javed
The Purpose of Life

Translation from the Urdu by Ayesha Javed and Mara Ahmed:

The Purpose of Life by Ayesha Javed

We are living in strange times. Hundreds of thousands of people have left this world on account of the pandemic. Their lives were just as valuable as yours or mine. This should be a moment of deep reflection for all of us. We should realize what a gift life is, a precious gift from God, and how every waking moment is a blessing. We should be compelled to contemplate the true meaning and purpose of our lives.

When God created us, God did not intend to forsake us or leave us in the dark. Rather, we were given the tools to fully realize our mental and spiritual potential. This is why our lives are filled with examples of wisdom and knowledge. It up to us to formulate the meaning of our lives in light of such guidance. Only a purposeful life can awaken thoughtful action and hard work, and only through action can we fully access our power and hope for improvement and progress.

According to the poet and philosopher Muhammad Iqbal, when Adam took his first steps in the world, the angels welcomed him thus:

Open your eyes: behold the sky and earth and atmosphere
Look at the sun rising in the east

Meaning, comprehend and analyze this world so you can triumph.

I consider myself extremely fortunate that at the age of five, I experienced an academic and literary environment whose profound effects continue to enrich my life. My education began at the Embassy School in Jeddah, Saudi Arabia. The school’s wonderful atmosphere and the selfless dedication of our teachers were both rare — hard to find in this day and age. Our school’s annual graduation was celebrated with great enthusiasm. There would be plays and speech competitions inspired by the poetry of Allama Iqbal and other well-known poets. All the people associated with the school, both teachers and students, were keen to participate in those functions. Such literary events had far reaching effects, beyond the walls of the school, and were successful in bringing together the community at large. To this day, everyone who was affiliated with that school remembers it with great fondness.

It was an institution that instilled a love of knowledge in all of us, and a desire for purposeful action. When educational institutions become businesses driven by profit, they can only teach students to focus on the acquisition of wealth. Purity of intention or the ability to sacrifice for others, both go by the wayside. Knowledge that is self-serving and divorced from community service is useless and treacherous. But knowledge acquired to nourish one’s soul and serve others, can be a kind and dependable ally. One of the biggest tragedies of our time is that students are not taught ilm-e-nafay (altruism) or acquainted with essential, core values. This is why students prefer to acquire information that will mostly facilitate material success.

As the poet Allama Iqbal has said:

Greed has decimated the human race
Become a statement of unity, become the language of love

Knowledge can be of two kinds: medical knowledge that has to do with healing the body, and spiritual knowledge that has to do with healing the soul. One can make the most of both if one’s intentions are honest and just, and if one takes account of divine guidance.

We are only here, on earth, for a limited time. Our present struggles, in 2020, are a powerful reminder of this fact. It would, therefore, behoove us to think carefully about the meaning of our lives, in a way that makes us useful and fully realized in the here and now, but also for generations to come.

There are two paths before us. One satisfies worldly ambitions and has a material dazzle to it. It ends when our lives end – it is impermanent and ultimately pointless. The other path is eternal, boundless, permanent. This is the path of humanitarian work, and it reflects God’s teachings.

In order to follow this eternal path, we must improve ourselves, be of service to others, and become assets for our community.

According to Iqbal:

Life is bigger than calculations of profit and loss
Sometimes life is living, and other times valuing the lives of others more

The greatest people in history, those who left a benevolent mark on the world, were people who put the needs of others before their own and served humanity with great compassion and sincerity. This is the path of salvation for all of us.

All audio, text and images are under copyright © Neelum Films LLC

 

 

 

 

 

 


Leave a comment